Darul-uloom Deoband endorses Moroccan Moon Sighting for Britain

Darul uloom Deoband

Ques­tion: You will be well aware of the con­tro­ver­sies regard­ing the sight­ing of the moon here in the UK. For a peri­od of time our respect­ed schol­ars and the rep­re­sen­ta­tives of the esteemed insti­tute of Deoband fol­lowed the authen­tic sight­ings of Mor­roc­co con­sid­er­ing it as a near­by coun­try, which is in accor­dance with the Shari­ah and the Hanafi school of thought.

The only set­back was that occa­sion­al­ly the news of sight­ing the moon was delayed to an extent that on one occa­sion we fast­ed on not hear­ing any news about the moon being sight­ed, only to find out lat­er on that day that it was sight­ed, there­fore the fast was bro­ken and Eid cel­e­brat­ed.

The indi­vid­u­als who were respon­si­ble for the research of the moon sight­ing should have calmed down the sit­u­a­tion and rebuilt con­fi­dence in the gen­er­al com­mu­ni­ty, but instead, they went run­ning around to and fro, to Darul Iftaa’s around the globe to get a fat­wa issued so that fol­low­ing Saudi’s sight­ings would be made per­mis­si­ble. They pub­lished such fat­wa exten­sive­ly cre­at­ing an atmos­phere that fol­low­ing Saudi’s sight­ing was the only per­mis­si­ble way and that it was wrong to fol­low Moroc­co. When in real­i­ty the out­come of the­se fat­was was to grant some flex­i­bil­i­ty in times of dif­fi­cul­ty. Grant­i­ng flex­i­bil­i­ty under tem­po­rary cir­cum­stances and issu­ing ver­dicts for per­ma­nent sit­u­a­tions are sep­a­rate mat­ters alto­geth­er.

This all lead to a con­fu­sion result­ing with a group of peo­ple try­ing to insti­gates Saudi’s obser­va­tions and con­trary to this, some schol­ars eager to fol­low the right­eous path, who were nev­er sat­is­fied with the Saudi obser­va­tions. As time passed Saudi sight­ings were proved wrong on many occa­sions.

If the Saudi obser­va­tions had been cor­rect, there would not have been any con­tro­ver­sy at all. But time and time again Saudi has proved itself incor­rect. The evi­dence is that on many occa­sions Saudi announces the sigh­ing of moon, when not a sin­gle per­son sights the moon in any part of Asia or Africa where the hori­zon is most­ly clear as well. What’s more is that there is no sight­ing of the moon in any part of Amer­i­ca, Canada or West Indies where the sun sets eight hours after Saudi; and the cres­cent has grown much big­ger.

For instance, this Shawwal 1423H on Wednes­day evening Saudi made an announce­ment for Eid and a large num­ber of Mus­lims here in the U.K. cel­e­brat­ed Eid on the fol­low­ing day where­as Mus­lims were fast­ing Amer­i­ca, Canada, Pana­ma, and Bar­ba­dos and they cel­e­brat­ed Eid on Fri­day. This episode repeats itself near­ly every year.

The pur­pose of putting this in writ­ing is so that we pon­der over the prob­lems and dilem­mas that are aris­ing as a result of the­se pre­ma­ture Saudi announce­ments and to rec­ti­fy the sit­u­a­tion (if pos­si­ble).

The fol­low­ing prob­lems will arise when­ev­er Saudi will make a pre­ma­ture announce­ment:

  1. Keep­ing a fast of Ramad­han in Sha’ban, which con­tra­dicts the Hadeeth as well as mis­leads peo­ple into think­ing that it is a fast of Ramad­han when in real­i­ty it is not
  2. Chang­ing a day or two of Sha’ban into Ramad­han, which con­tra­dicts the verse of Qur’an in which the peo­ple of the days of igno­rance were pro­hib­it­ed from chang­ing the names of the months. They used to change the name of the mon­th accord­ing to their lik­ings.
  3. Cel­e­brat­ing Eid in Ramad­han
  4. Omit­ting a fast of Ramad­han, when all are equal­ly com­pul­so­ry
  5. Chang­ing Ramd­han into Shawwal, which is for­bid­den as above
  6. Many pious peo­ple start the six fasts of Shawwal straight after Eid and under such cir­cum­stances they would be fast­ing on the day of Eid which is in com­plete con­tra­dic­tion with the Hadeeth
  7. It is under­stood from many books of Fiqh that any form of Ibaadah is not accept­able before the due time, but is accept­ed if it is per­formed lat­er than sched­ule time due to any valid excuse and the respon­si­bil­i­ty of ful­fill­ing that ibaadah is dis­charged. For exam­ple pray­ing Zuhr Salaah 2 min­utes before Zawal will not be accept­ed under any cir­cum­stances at all. But if it was prayed late close to Asar time, it would be accept­ed and no sin com­mit­ted if there was a valid excuse. Sim­i­lar­ly, Qur­bani can be made on the eleven­th or twelfth if it is not made on the ten­th but under no cir­cum­stances can it be made on the ninth of Zil-Hij­jah. It is the same com­mand for fast­ing and Eid. If fast or Eid is cel­e­brat­ed before time it will not be accept­ed, but if for any rea­son there is a delay because the sight­ing of the moon can­not be clar­i­fied then this Ibaadah will be accept­ed and the respon­si­bil­i­ty dis­charged
  8. How is it pos­si­ble that when-ever Saudi makes a hasty announce­ment of the moon sight­ing, it is not vis­i­ble in Asia, Africa, or any oth­er west­ern coun­tries even though they have a clear hori­zon. How can it be pos­si­ble that the moon is sight­ed at sun­set time in Saudia and 8 hours lat­er it can­not be seen in Amer­i­ca, Canada or the West Indies? The prob­lem has occurred many times as well as this year. There­fore, this itself weak­ens the claims of the Saudi obser­va­tions
  9. It is stat­ed in a Hadeeth from which we can under­stand that we should stop and start fast­ing in accor­dance with the moon sight­ing com­plete 30 days of Sha’ban if moon sight­ing is not pos­si­ble due to dis­tort­ed vis­i­bil­i­ty If we look at real­i­ty, we have left the prac­tice upon this Hadeeth. What, don’t we have per­mis­sion to keep com­plete 30 days of Sha’ban or Ramad­han? Don’t we have the flex­i­bil­i­ty to wait instead of jump­ing to con­clu­sions and act­ing upon Saudi’s hasty sight­ing where there is a great pos­si­bil­i­ty of our Ibaadah not being accept­ed because it is done before due time? We should there­fore act only upon such ver­dicts that save us from ruin­ing our Ibaadah.
  10. From a Hanafi point of view, a sin­gle trust­wor­thy person’s sight­ing is accept­ed for fast­ing, but for the sight­ing of Eid, it is impor­tant for a large group of peo­ple to give evi­dence of the moon being sight­ed. A num­ber of peo­ple upon whom oth­ers have con­fi­dence and sat­is­fac­tion. Where­as accord­ing to them (the Saudi) one or two per­sons sight­ing is accept­ed for Eid.
  11. There has always been an atmos­phere of con­tro­ver­sy, con­fu­sion and argu­ment amongst the Schol­ars and the gen­er­al com­mu­ni­ty when­ev­er Saudi has made hasty announce­ments about the sight­ing and when­ev­er they com­plete 30 days there is peace and sat­is­fac­tion amongst the Mus­lim com­mu­ni­ty. Our elders have always had doubts and sus­pi­cions regard­ing the Saudi announce­ments. If their dates were accept­ed to be accu­rate then Pak­istan, India etc. would be under more oblig­a­tion to fol­low them because they are more closer to Saudi than U.K. Hakeemul Ummah Sheikh Thanwi (RA) has stat­ed and which is men­tioned in Fatawa Raheemiyah at the end of vol­ume sev­en, that if the obser­va­tion of Saudi is proved to be accu­rate then the Mus­lims of India should fol­low Saudi. This was said approx­i­mate­ly 60–70 years ago when in real­i­ty this has not been act­ed upon since, when there is only the Ara­bi­an Gulf sep­a­rat­ing the Indi­an sub-con­ti­nent from Saudi and there is not much time dif­fer­ence between them as well.
  12. If Saudi obser­va­tion is fol­lowed blind­ly, peo­ple will avoid con­sult­ing the learned schol­ars and the respon­si­ble author­i­ties. The sources of media are so advanced that peo­ple can learn the news of the moon sight­ing through tele­phone, T.V. and satel­lite and many a time they start to spread the news by mak­ing their announce­ments before sun­set. In future if this con­tin­ues, then peo­ple will not wait for the announce­ment to be made from their local Mosques and it will be impos­si­ble to act con­trary to the­se hasty announce­ments.

The­se are some major prob­lems that have been cre­at­ed by act­ing upon pre­ma­ture announce­ments of the moon sight­ing. What is hap­pen­ing in this coun­try is that schol­ars of all dif­fer­ent schools of thought are con­stant­ly try­ing to fig­ure out a solu­tion for this great cri­sis, but unfor­tu­nate­ly a great major­i­ty of our schol­ars fol­low­ing the Deobandi school of thought are sleep­ing with a con­tent mind decep­tive­ly assured that what was made per­mis­si­ble for cer­tain cir­cum­stances under tem­po­rary con­di­tions can be made prac­ti­cal in all sit­u­a­tions, even though we have under­stood hasty actions can ruin our Ibaadah where­as delay­ing does not.

Alhum­do­lil­lah, a num­ber of peo­ple who take inter­est in knowl­edge and research includ­ing our up and com­ing gen­er­a­tions of Mus­lims here in the U.K. who hold great knowl­edge and are flu­ent in Eng­lish, under­stand the weak­ness­es of Saudi obser­va­tions.

At the moment in time, what we need is for the local schol­ars to sit down and acknowl­edge the weak­ness of the­se pre­ma­ture announce­ments and the prob­lems that are aris­ing from them. The gen­er­al pub­lic still awaits for the cor­rect announce­ments to be made. It would prove to be a great step in the right direc­tion even if there is a sin­gle schol­ar in each local­i­ty who takes up the respon­si­bil­i­ty of explain­ing to the com­mu­ni­ty the real­i­ty of the­se hasty announce­ments.

The schol­ars of truth have always had a habit of not being afraid of speak­ing the truth regard­less of any oppo­si­tion. I have firm and full belief through my knowl­edge and expe­ri­ence that the gen­er­al com­mu­ni­ty pos­sess­es the capa­bil­i­ty to accept the­se changes because they are in view of the prob­lems and weak­ness­es cre­at­ed by the Saudi pre­ma­ture announce­ments. If it is done with great wis­dom, by point­ing out the errors and respec­tive cor­rec­tions, through lec­tures or pri­vate gath­er­ings, there will be no sign of any uproar or aggres­sion. May Allah grant us all the abil­i­ty to rec­ti­fy and cor­rect (Ameen)

I have stud­ied your queries very atten­tive­ly. It has been writ­ten from here in the past that announce­ments should be made for the sight­ing of the moon, based on infor­ma­tion of sight­ings from your close coun­try.

It is incor­rect to make announce­ments of Eid and Ramad­han by fol­low­ing Saudi for the sake of ease. Even if a fat­wa has been obtained for this pur­pose, it is again­st the prin­ci­ples of Shari­ah.

There is a far greater dis­tance between Britain and Saudi where­as Moroc­co is a lot closer to Britain. To aban­don a close country’s sight­ings and to accept Saud­is sight­ing, is in con­tra­dic­tion with the prin­ci­ples of Fiqh. There­after con­sid­er­ing the state of Saudi obser­va­tions and the dif­fi­cul­ties that are aris­ing from them, which you have writ­ten and atten­tion towards; no deci­sion should be ever made blind­ly in accor­dance with the Saudi obser­va­tions. You should enforce with full strength the prac­tice of fol­low­ing Moroc­co sight­ings. This is the clos­est to the truth.”

Allah Knows Best.
Mufti Habibur Rah­man
Mufti Darul-uloom Deoband
18th of Safar 1424 AH

The Answer is cor­rect!
Hazrat Maulana Kafeelur-Rah­man Nishat
Hazrat Maulana Mufti Zafeerud­din
Hazrat Mufti Muhammed Abdul­lah

Darul uloom Mazahirul Uloom

The answer is cor­rect and in accor­dance with the prin­ci­ples of Shari­ah. The coun­tries closer in dis­tance should be con­sid­ered where there isn’t a lot of dif­fer­ence between sun­rise and sun­set times.”

Mufti Muhammed Tahir Maza­hirri
Mufti Maza­hir­ul-uloom Saharun­pur
1st of Sha’aban 1424 AH

Darul uloom Mazahirul Uloom

I also ful­ly agree with the answer.

Mufti Ahmed Khan Puri
Madrasa Islamia Taleemud-Deen Dhabail”

Urdu Translation:

اس ملک ميں ماہِ رمضان و عيد کے موقع پر ثبوتِ هلال کے باب ميں جو اختلاف ہے وہ آنجناب کو معلوم ہی ہے۔ ایک مدت تک ہمارے علماءِ حق علماءِ دیوبند کا نمائندہ طبقہ قریبی ملک مراکش کی رویت کی معتمد خبر کی بنياد پر فيصلے کرتا تها اور وہی اقرب الی الصحۃ قابل اطمئنان اور حنفيہ کے اصول کے مطابق حزم و احتياط پر مبنی تها مگر چونکہ وہاں سے عموماً اطلاع ملنے ميں تاخير ہوتی تهی جسکی وجہ سے لوگوں کو انتظار کرنا پڑهتا تها اور ایک مرتبہ عيد کا چاند نہ ہونے کی اور پهر دوسرے روز ثبوت ہو جانے پر عيد کی اطلاع اور روزوں کو توڑنےکی خبر دی گئی جس سے لوگوں ميں کافی بيچينی پيدا ہو گئ حالانکہ بيچينی اور پریشان ہونے کی کوئ خاص بات نهيں تهی۔ اسطرح کے واقعات کبهی کبهار ہر جگہ پيش آتے رہتے ہيں، ضرورت تهی کہ ہمارے علماء کا وہ طبقہ جو اس وقت چاند کی اطلاع اور تحقيق کی باگ دوڈ اپنے ہاته ميں لئے ہوئے تها عامۃ الناس کو اطمئنان و سکون کی تلقين کرتا اور انهيں سمجهاتا مگر انهوں نے ان احوال کو مجبورکن احوال بتا کر ملک و بيرونِ ملک ارباب فقہ و افتاء کی خدمت ميں پيش فرما کر سعودی رویت کے مطابق رمضان و عيد کی ابتدا کے جواز کا فتوی حاصل کر ليا اور اسکی خوب اشاعت کی اور اسطرح کا ماحول بنا دیا کہ یهی حق ہے اور اسکے خلاف سراسر باطل ہے حالانکہ ان تمام مفتيان کے فتوے کی حقيقت صرف اتنی تهی کہ اور ہے کہ ضرورت اور مجبوری کيوجہ سے اسپر عپل کرنے کی گنجائش ہے۔ گنجائش دین ا اور وقتی حل پيش کرنا اور چيز ہے اور صحيح فتوی مطابقِ واقعہ ہونا امرِِ آخر ہے۔ مشکل یہ پيش آئ کہ وقتی حل کو دائمی حل سمجه ليا گيا، بهرحال ایک فضا سعودی رویت کو درست بنانے کی قائم کر دیگئ اور اسپر کسی حد تک عمل شروع بهی ہو گيا مگر جو علما تحقيق حق کر رہے تهے ان کا خمير نہ اس وقت مطمئن ہوا نہ اب مطمئن ہے اور وقتاً فوقتاً ایسے حالات پيش آتے رہتے رہے جس نے سعودی رویت کے دعوے کو غلط بتا دیا۔

اگر سعودی رویت کی اطلاع بالکل صحيح ہوتی تب توہميں کيا کسی فردِ مسلم کو بهی اس خبر کے قبول کرنےميں تانل نہ کرنا چاہیے مگر کئ برس کے مشاهدہ اور تجربہ کے بعد یہ بات کهل  کر سامنے آ رہی ہے کہ اکثر اوقات ميں ان کے ہاں رمضان و عيد کی اطلاع قبل از وقت ہو رہی ہے جسکی کهلی دليل یہ ہے کہ سعودی مملکت کی طرف سے رویت کے باوجود ایشيا اور افریقہ کے خطوں ميں جهاں مطالع صاف ہوتا ہے کهيں چاند کی رویت نهيں هوتی بلکہ امریکہ کينيڈا اور ویسٹ انڈیز کے ممالک جهاں سعودیہ کے غروبِ آفتاب کے بعد آٹه گنٹهوں کے بعد سورج غروب ہوتا ہے اور اکثر جگهوں پر مطلع صاف رهتا هے کهيں چاند نظر نهيں آتا۔

اسی شوال ١۴٢٣ بده کی شام سعودیہ سے عيد کے چاند کی خبر آگئ اور یهاں ہمارے ایک بڑے طبقہ نے سعودیہ کی مواقفت ميں عيد کر لی جبکہ اس دن امریکہ،کينيڈا،پانامہ اور بارباڈوس سب جگہ روزہ تها اور انهوں نے جمعہ کو عيد کی ہے یہ قصہ تقریباً ہر سال کا ہے۔ اس تحریر کا مقصد یہ ہے کہ جس رویت کی خبر پر ہم اطمئنان سے روزہ اور عيد کر رہے ہيں اسکے مفاسد پر اجمالی روشنی ڈالی جائے تاکہ اگر یہ چيز قابلِ اصلاح ہے تو اسکی اصلاح کی فکر کی جائے۔

جب سعودیہ کی رویت کی اطلاع قبل از وقت آیگئ تو حسبِ ذیل مفاسد پيدا ہوں گے

١۔ ماہِ شعبان ميں رمضان کا کم ازکم ایک روزہ ہونا جو حدیث لَا تَقَدَّمُوا رَمَضَانَ بِصَوْمِ يَوْمٍ وَلَا يَوْمَيْنِ (الحدیث) کے مخالف ہونے کے ساته ساته اسکو ملتزم ہے کہ لوگ اسے رمضان کا روزہ رکهکر سمجهينگے کہ ہم نے رمضان کا روزہ رکه ليا حالانکہ وہ رمضان کا روزہ ہے ہی نهيں

٢۔ شعبان کے ایک یا دو دن کو رمضان بنا دینا، جو آیت کریمہ إِنَّمَا النَّسِيءُ زِيَادَةٌ فِي الْكُفْرِ والی صورت ہے اہلِ جاهليت کسی اور غرض سے مهينوں کی تقدیم و تاخير کيا کرتے تهے یهاں دنوں ميں وہ عمل ہوتا رهتا ہے جو غلط ہے

٣۔ ماہِ رمضان ميں عيد کا ہونا۔ اسلئے کہ جب جلدی فيصلہ کر ليا جائيگا تو لامحالہ عيد کا چاند نہ ہو گا اور عيد کر لی جائيگی تو عيد رمضان کے آخری دن ميں ہو گی اور اس ميں ایک اور پڑی خرابی یہ ہو گی کہ

۔رمضان کے ایک روزہ کا فوت ہو جانا، جبکہ رمضان کا ہر روزہ فرضيت ميں برابر ہے اور جلدبازی کی صورت ميں اکژ و بيشتر ہی امت ایک فرض روزے کی تارک بن رہی ہے 

۔ رمضان کو شوال بنانا جو نمبر دو کی طرح مذموم ہے

۔ بهت سے صلحاء شوال کے چهہ روزے رکهتے ہيں اور وہ فضيلت حاصل کرنے کيلئے عيد کے دوسرے ہی روز سے روزے رکهنا شروع کر دیتے ہيں اس صورت ميں انکا پهلا روزہ حقيقتاً عيد کا دن ہو گا جو لا تَصُومُوا هَذِهِ الأَيَّامَ کے صریح مخالف ہے اسطرح ایک اچها طبقہ اس منکر ميں مبتلا ہے کہ وہ عيد کے دن روزہ رکهتا ہے

٧۔ کتبِ حدیث و فقہ سے یہ مسئلہ صاف معلوم ہوتا ہے کہ کسی عبادت نماز روزہ قربانی وغيرہ کو وقت سے پهلے ادا کرنا نہ درست ہے نہ ہی وہ عبادت ادا ہو گی، ليکن اگر کسی عذر کی وجہ سے تاخير ہو گئ اور وقت گزرنے کے بعد ادا کيگئ تو وہ قضا کی صورت ميں بهی ادا ہو جائيگی اور فرض بهی ذمے سے ساقت ہو جائے گا مثلاً ظهر کی نماز زوال سے دو منٹ پہلے پڑه لی جائے کيسا ہی قوی عذر کيون نہ ہو وہ کسی طرح بهی ادا نهيں ہو گی، اگر پڑه لی تو دوبارہ پڑهنا ضروری ہو گا ليکن اگر کسی معذوری کے سبب تاخير ہو گئ اور عصر کے وقت ادا کر لی تو ذمہ سے فرض ساقط ہو جائيگا اور عذر کی وجہ سے گناہ بهی نہ ہو گا۔ اسی طرح قربانی دسویں کو نہ ہو گيارویں بارویں کو بهی ہو سکتی هے ليکن اگر کسی نے نویں ذی الحجہ کو قربانی کر لی یا شهری نے عيد کی رات کو قربانی کر لی تو قربانی صحيح نہ ہو گی اسطرح کے کئی مسائل فقہ ہيں جو آپ کے علم ميں هيں۔

٨۔ جب کبهی بهی سعودیہ نے هلال کے سلسلے ميں جلد فيصلہ کيا تو ایشيا افریقہ اور مغربی ممالک ميں باوجود مطلع کے صاف ہونے کے اکثر و بيشتر چاند نظر نهيں آتا آخر یہ کيسے ممکن ہے کہ غروبِ آفتاب کے وقت سعودیہ کے مطلع پر تو چاند نظر آے اور امریکہ کينيڈا ویسٹ انڈیز جهاں سعودیہ سے آٹه گهنٹے بعد غروبِ آفتاب ہو باوجود مطلع صاف ہونے کے چاند نظر نہ آئے۔ چنانچہ اس سال بهی یهی واقعہ پيش آیا ، اسلئے اس موقع پر سعودیہ کا دعوی رویت کرنا خود اپنے دعوی کو مخدوش بنا دیتا ہے۔

٩۔ حدیث شریف ميں حکم ہے حَدَّثَنَا أَبُو جَعْفَرٍ أَحْمَدُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الْعَزِيزِ الْقُرَشِيُّ ، ثنا يَحْيَى بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ بُكَيْرٍ ، ثنا مَالِكُ بْنُ أَنَسٍ ، عَنْ ثَوْرِ بْنِ زَيْدٍ الدِّيلِيِّ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ , أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ذَكَرَ رَمَضَانَ ، فَقَالَ : ” لا تَصُومُوا حَتَّى تَرَوُا الْهِلالَ ، وَلا تُفْطِرُوا حَتَّى تَرَوْهُ ، فَإِنْ غُمَّ عَلَيْكُمْ فَأَكْمِلُوا الْعِدَّةَ ثَلاثِينَ، یہاں چاند دیکهکر روزہ رکهنے اور چاند دیکهکر افطار کرنے کا حکم ہے آجکے اپنے احوال کا اگر جائزہ ليا جائے تو ہم نے اس حدیث پر عمل ہی چهوڑ دیا ہے۔ کيا موسم اور فضا کے ابرآلود ہونے کی شکل ميں ٣٠ شعبان یا ٣٠ رمضان پورے کرنے کی گنجائش نهيں ہے؟ اور اس صورت ميں بهی سعودیہ کا فيصلہ واجب العمل ہو گا؟ جبکہ تاخير کی صورت ميں کوئ نقصان نهيں ہےاور جلدی ميں خطرہ ہے کہ وہ فریضہ ادا ہی نہ ہو، ضرورت ہے کہ صرف اور صرف اُسی کے فيصلے پر مدار رکهے بغير کوئ ایسی تجویز اختيار کی جائے جسميں عجلت کے نقصانات سے حفاظت ہو جائے۔

١٠ ۔ حنفی نقطہ نگاہ سے ثبوتِ رمضان کی اطلاع ميں ایک عادل کی خبر بهی کافی ہے مگر هلالِ عيد کے ثبوت کيلئے اگر مطلع صاف ہو تو بڑی جماعت کی گواهی جن کی خبر سے علم (یعنی یقين و اطمینان) حاصل ہو ضروری ہے۔ وَإِنْ لَمْ يَكَنْ بِالسَّمَاءِ عِلَّةٌ لَمْ تُقْبَلْ إِلَّا شَهَادَةُ جَمْعٍ يَقَعُ الْعِلْمُ بِخَبَرِهِمْ کما فی الهدایۃ، جبکہ ان کے ہاں هلال عيد کے ثبوت ميں بهی دوایک فرد کی شهادت معتبر سمجه لی جاتی ہے۔

١١ ۔ اختلاف کا وجود، جب کبهی بهی سعودیہ کی جلد رویت کے مطابق فيصلہ کيا گيا تو پورے ملک ميں نزاع و خلاف اور اخبار ميں بحث و مباحثہ کی ایسی تيز ہوا چلتی ہے جسکا اثر ہر خاص و عام پر پڑهتا ہے اور جب وہ اطمینان سے ٣٠ شعبان یا ٣٠ رمضان پورے کر کے فيصلہ کرتا ہے تو پورے ملک ميں اطمینان و سکون کی لهر دوڈ جاتی ہے اور ایک ہی تاریخ ميں رمضان و عيد ہوتی ہے جيسا کہ گذشتہ دو ایک سال ميں ایسا بهی ہوا ہے، یہ اتفاق اسی وقت ہو سکتا ہے جبکہ ہم یهاں اپنی تاریخ کے مطابق هلال عيد و رمضان دیکهنے یا ثابت کرنے کی کو شش کریں۔ سعودیہ کی ابتداءِ ماہ هميشہ سے مختلف فيہ اور ما بہ النزاع رهی اور ہمارے تمام اکابر و مشائخ اسپر تذبذب کا اظهار کرتے رہے ہيں، اگر وہ تاریخ صحيح ہوا کرے تو هندوستان پاکستان والوں کيلئے اسکا حق زیادہ بنتا ہے بنسبت انگلينڈ والوں کيلئے۔ اسلئے کہ هندوپاک قریب ہے سعودیہ سے بنسبت برطانيہ کے، حضرت حکيم الامت تهانوی (رح) کا قول فتاوی رحيميۃ جلد سابع کے آخر ميں نقل کيا گيا هے (اس بات پر کہ حنفيہ کے یهاں اختلاف مطالع کا اعتبار نهيں ہے) کہ اگر سعودیہ کی رویت ثابت ہو جاے تو اهلِ هند پر اسکے مطابق رمضان و عيد کرنا ضروری ہو جایگا۔ یہ بات آج سے ساٹه ستر سال پهلے کی گئ ہے ليکن آج تک کبهی بهی اهلِ هند نے وہاں سےچاند کی اطلاع کی تحقيق نهيں کی، حالانکہ سعودیہ اور هندوپاک کے درميان صرف بحيرہ عرب حائل ہے اور وقت کا فاصلہ بهی کم ہے جبکہ سعودیہ اور انگلينڈ کے درميان دوگنا سے زیادہ فاصلہ ہے۔

١٢ ۔جب سعودیہ کی خبر پر فيصلے ہوتے رهينگے تو لوگ اور عوام الناس ، علماء اور ذمہ دار حضرات سے رفتہ رفتہ آزاد ہو کر خود ہی فيصلے شروع کر دینگے اسلئے کہ وہاں سے ٹيليفون اور ٹی وی اور سٹيلائٹ کا سلسلہ اس قدر عام ہے کہ اسپر عمل کرنا دشوار ہو جائيگا، چنانچہ یہ مشاهدہ ہو رہا ہے کہ کئ مرتبہ وہاں سے قبل مغرب ہی اطلاع حاصل کرکے لوگ خود هی اعلان اور شور شروع کر دیتے ہيں آئندہ لوگ مساجد کی طرف سے اعلان کا انتظار بهی نهيں کرینگے اسلئے یہ چيز بهت ہی غور کے قابل ہے۔

یہ چند اہم اہم مفاسد اور نقصانات ہيں قبل از وقت چاند کی اطلاع ملنے پر جنکی طرف اجمالی طور پر اشارہ کيا گيا ہے واقعہ یہ ہے کہ اس ملک کے مختلف فکروخيال کے ارباب حل و عقد اس موضوع پر اب سنجيدگی سے غوروفکر کر رہے هيں اور کسی بهتر حل کی تلاش ميں ہيں مگر ہمارا طبقہ علماء اهل و حق علماء دیوبند کا برسرِ اقتدار طبقہ نهایت خاموشی اختيار کئے ہوے ہے اور جس چيز کو مجبوری اور اضطرار کی حالت ميں کالميۃ للمضطر گنجائش اور جواز کا درجہ دیا گيا تها اسپر ایسا قانع ہے کہ اب وہی آخری حل معلوم ہوتا ہے۔

حالانکہ عجلت بازی ميں سراسر نقصان ہے، اور تاخير ميں ميں کوئ نقصان نهيں ہر عبادت اپنے اپنے وقت پر ادا ہو گی الحمد لله علمی ذوق رکهنے والے حضرات اور فکر و تحقيق کے خواہشمند احباب اور نئ نسل کے انگریزی لکهے پڑهے نوجوان مسلمان سعودیہ کے فيصلے کی کمزوری محسوس کر رہے ہيں لهذا ضرورت ہے کہ ہمارے علماء مل جل کر کے بيٹهيں عوام ابهی بهی علماء کے صحيح فيصلوں کے منتظر ہيں اور ان کے اس اقدام پر لبيک کهنے کو تيار ہيں اسلئے ایک ایک شهر کے علماء بهی کم از کم اس مسٰئلے کو حل کرنے کی کوشش کریں تو اپنے یهاں کی مقامی مجلسِ عمل (جس نام سے بهی ہو) کے پليٹ فارم سے اسکی اشاعت کریں تو ایک مفيد اقدام ہو گا۔

علماء اهلِ حق کا شيوہ ہے کلمۃ الحکمۃ ضالۃ المومن حيث وجدها فهو احق بها، نيز کسی فيصلہ کے غلط پہلو سامنے آ جایيں تو اس سے رجوع کرنے ميں ذرہ برابر عار محسوس نهيں کرتےہيں۔

احقر اپنے علم و تجربے کی حد تک یقين سے کهتا ہے کہ عوام ميں اس تبدیلی کے قبول کرنے کا پورا پورا جذبہ موجود ہے اسلئے کہ سعودیہ کے فيصلوں کے خلاف دیکه رہے ہيں آ  دن اسکا مشاهدہ ہو رہا ہے، حکمت و موعظت کيساته بيانات و خطبات اور عمومی و خصوصی مجالس ميں ان غلطيوں کی نشاندهی کی جاے تو کوئ وجہ فتنہ اور اختلاف کی نهيں ہے۔

آج بتاریخ ٣ مارچ ٢٠٠٣ بروز پير شام کو (جبکہ مقامی اسلامی تاریخ ٢٩ زوالحجۃ اور سعودی تاریخ ٣٠ تهی) مغرب سے پهلے اور مغرب کے بعد متصلاً مدینہ مسجد اور جامع مسجد بارباڈوس ویسٹ انڈیز کے چند علماء اور متعدد نمازی حضرات نے چاند دیکهيے کی کوشش کی پهر مغرب کی نماز پڑهتے ہی فوراً سمندر کے کنارے جو مغربی جانب تها محرم کا چاند دیکهنے کی کوشش کيگئی مگر چاند نظر نہ آیا جبکہ مطلع بالکل صاف تها اور بادل وغيرہ کچه بهی نهيں تها۔

نوٹ: دوسرے دن ۴ مارچ کی شام کو محرم کا چاند صاف نظر آیا اور بهت سے لوگوں نے اسکا مشاهدہ کيا جسکے حساب سے دو محرم بروز جمعہ ہو گی۔

آپ کی تحریر غور کے ساته پڑهی۔ اس سےقبل بهی یهاٰں سے لکها جا چکا ہےکہ اپنے قریبی ملک مراکش کی رویت کی خبر کی بنياد پر اپنے یهاں رویت کا اعلان کریں۔ بطریق موجب خبر کے آنے کا ایک مرتبہ انتطام کر لينا مناسب ہو گا۔سهولت پسندی ميں پڑه کر سعودی رویت کے مطابق اپنے یهاں رمضان وعيد کا اعلان کرنا درست نهيں۔اگر کوئ شرعی فتوی بهی اس طرح حاصل کياگيا ہے تو یہ شرعی اصول کے خلاف ہے۔ برطانيہ سےسعودیہ کی مسافت بهت لمبی هےجبکہ مراکش بالکل قریب ہے۔ 

مقام قریب کی رویت سے یکسر صرفِ نظر کر لينا فقهی اصول کے بهی خلاف ہے۔پهر سعودی رویت کا جو حال آپنے تحریر فرمایا هے،نيز اسکے مفاسد کی طرف جو توجہ دلائ ہے اس کو پڑهنے کے بعد بهی آنکه بند کرکے سعودیہ کی رویت پر اپنے یهاں فيصلہ نہ کرنا چاہيے۔آپ پوری قوت کے ساته مراکش کی رویت کے قبول کرنے اور اس پر عمل کرنے کا رواج ڈاليں۔ یهی اقرب الی الصحۃ هے۔