Hazratjee Maulana Inaamul Hasan (RA) endorses Observatory Assistance for Britain

Bangla Wali Masjid

15 Shabaan 1407

15 April 1987

Dear Hafiz Patel Sahib and other members of the Shuraa and all the responsible brothers of this work of Dawah.

 السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

The blessed month is coming close. On this occasion there has been a long controversy in regards with the sighting of the moon. Ramadhan Mubarak and the Eids are the fundamental basis of Islam. We need to be very cautious and fearful in this matter because making right or wrong judgement can lead the whole country in the right or wrong direction.

On these occasions the responsible brothers have a very grave duty upon them, especially when people are relying on them heavily due to the great effort of this work people throughout the country accept their decisions. It is very clear and evident in the Qur’an regarding the cycles of the moon and sun… الشمس والقمر بحسبان الخ  It is possible to find errors in the calculations of the humans but there is no flaw in the calculations of the creator.

The English dates that are set by the experts of this field are possible dates of sighting the moon. We do not have to trust them but staying within the bounds of Shariah if there is any sighting of the moon then Ramadhan and Eid will commence or else it will be the following day without doubt. This is no innovated system but this is practiced all over the place and neither does anyone have any objections about it. Wherever the horizon is clear and there is a sighting of the moon on that date it is brought into action and if not then it is without doubt the following day.

Now what is left is that when, claims of moon sighting is made even before there is any slightest possibility of sighing. There is no credit given to this type of claims and it is against the actions of Jamhoor Ulama as well. To be cautious in regards with this matter, we can take calculations from experts in the Astronomical field which will include Muslims and non-Muslims. From our point of view we consider Dr Ilyas of Malaysia as a Muslim expert in this field.

Assistance can be taken from the Nautical Almanac Office of England. If their calculated dates turn out to correct then it will be understood that there was possibility of sighting the moon on that date and if there was no Shar’ee sighting of the moon on that date then the following date will be considered as definite. It is not hidden from you brothers that expert astronomers calculate the dates of solar and lunar eclipses many years beforehand and thousands of people visibly experience these eclipses on these dates where there are clear skies. Similar is the situation of sighting of the moon with more or less a difference of one day.

Therefore on such occasions where their dates are not accepted to be exact, at the same time you cannot completely reject their calculations. Instead, whilst staying within the bounds of Shariah, advantage should be taken of their calculations.

From: Hadharat Jee

Written by: Raheem Dadkhan

Note; Three, four copies of this issue have been sent to different members of the Shuraa. It should be read in front of all members of the Shuraa incase anyone does not get a copy of it.

Urdu Translation:

مکتوب گرامی حضرت مولانا محمد انعام الحسن صاحب کاندهلوی (حضرت جی) قدس سرہ

باسمہ سبحانہ وتعالی
بنگلہ والی مسجد
(15-04- ١۵ شعبان المعظم ( 1987

مکرمين و محترمين بندہ حافظ پٹيل صاحب جميع اہل مشورہ و سارے ہی دعوت کے فکر مند و ذمہ دار احباب

وفقنا الله و ایاکم لما یحب و یرضی
اسلام عليکم و رحمۃ الله برکاتہ

ماہ مبارک قریب آ رہا ہے۔ اس مو قعے پر رویت هلال کے بارے ميں وہاں مدتوں سے اختلاف چلا آ رہا ہے۔ رمضان مبارک و عيدین شعائر اسلام ميں سے ہے۔ ان ميں بہت احتياط اور ڈرتے رہنے کی ضرورت ہے کيو نکہ رویت کے صحيح یا غلط ہونے پر پورے ملک کے رمضان و عيدین کے صحيح یا غلط ہونے کا مدار ہے خصوصاً ایسے موقعے پر ہمارے احباب کی ذمہ داریاں بهت ہی بڑه جاتی هيں جبکہ دعوت کے کام کی وجہ سے لوگوں کا عمومی رجوع انهيں کی طرف ہوتا ہے اور پورے ملک ميں ان کے فيصلوں کو اهميت بهی دی جاتی ہے۔

چاند اور سورج کی گردش سے متعلق قرآنِ حکيم کی یہ آیت بهت ہی صاف و صریح ہے “الشمس و القمر بحسبان” انسانوں کے حساب ميں غلطی ہو سکتی ہے مگر رب العالمين نے جس ترتيب پر انکو چلا رکها ہے وہ اٹل اور یقينی ہے۔ رویت هلال کے بارے ميں انگریزی تاریخوں کے حساب سے ماهرین هئيت جو تاریخ بتاتے ہيں وہ امکانی تاریخ ہوتی ہے . ہميں اس پر یقين تو نهيں کرنا چاهئے مگر شریعت کی حدود و قيود ميں رهتے ہوے اس سے رمضان و عيدین کا تعين ہو جاے گا ورنہ اسکے دوسرے دن کی تاریخ یقينی مانی جاے گی۔

اور یہ ترتيب کوی نئی نهيں ہے بلکہ ہر جگہ اسی کے مطابق عمل ہے اور اسميں کسی کو اشکال بهی نهيں۔ جهاں مطلع صاف ہوتا ہے اور اس تاریخ ميں رویت ثابت ہو جاتی تو اس پر عمل کيا جاتا ہے اور نهيں ہوتی تو دوسرا دن یقينی سمهجا جاتا ہے۔

رہا حساب دان جس تاریخ کو امکانِ رویت بتاتے ہيں اس دن سے پهلے اگر رویت هلال کو ثابت کرنے کی کو شش کی جائيگی تو اسکا اعتبار نهيں ہوگا اور یہ جمهور کے تعمل کے بهی خلاف ہے۔

اب اسميں احتياط کو مدِ نظر رکهتے ہوے ہم اتنا کر سکتے ہيں کہ مختلف ماهرینِ هيئت سے اسکا حساب کر واليں جنميں مسلمان ماهرین بهی ہیں اور غير مسلم بهی۔ هماری نظر ميں مسلمان ماهرینِ هيئت ميں سے پروفيسر الياس صاحب مليشيا والے بهی ہيں۔ انگلينڈ کے محمکہ موسميات والوں سے بهی اس ميں مدد لی جا سکتی ہے۔ اگر ان سب کا حساب یکساں آ گيا تو انکی بتای ہوی تاریخوں ميں صرف امکانِ رویت مانا جائيگا۔ اور اگر شرعی طور پر اس دن رویت ثابت نہ ہو سکی تو اسکے بعد والی تاریخ کو یقينی سمجها جائيگا۔

اور آپ حضرات پر مخفی نهيں ہے کہ ماهرینِ هيئت سالوں پہلے سے سورج گرهن اور چاند گرهن کی تاریخيں مقرر کر دیتے ہيں اور هزاروں لوگ انهيں تاریخوں ميں مطلع صاف ہونے کی صورت ميں کسوف و خسوف کا مشاهدہ بهی کر ليتے هيں۔ اسی طرح رویت سے متعلق بهی تقریباً یهی بات ہے۔ زیادہ سے زیادہ فرق ایک دن کا پڑہ جاتا ہے۔

لهذا جهاں ان حساب دانوں کی تاریخوں کو بالکل یقينی بهی نهيں مانا جاتا وہاں انکی رائے بالکل نظر انداز بهی نهيں کی جا سکتی بهر حال شریعت کی حدود و قيود ميں رہ کر ان کے حساب سے فائدہ اٹهایا جا سکتا ہے۔

فقط والسلام
منجانب حضرت جی دامت برکاتهم

بقلم رحيمداد خان

نوٹ: اس مضمون کی تين چار نقليں شوری کے مختلف ساتهيوں کے پاس بهيجی جا رہی ہيں تاکہ کسی و جہ سے ایک کو خط نہ مل سکے تو دوسرا اس کو سب احباب کے سامنے پڑه کر سنا دے۔

والسلام