Jamia Khair Ul Madaris negates Saudia Moon Sighting for Britain

We have learned from very reli­able sources that the thir­ty two years Saudi Cal­en­dar has been set accord­ing to Green­wich (Lon­don) and the announce­ments for Eid, Ramad­han are made accord­ing to it and not accord­ing to moon sight­ing or by fol­low­ing prin­ci­ples laid down in the Islam­ic Shari­ah. A basic proof of this fact is the state­ments made in the for­ward of Saudi Cal­en­dar.

The sec­ond proof is that when offi­cials of Waizarat Ad-Difah wal Tairan were asked that on 21st of Feb­ru­ary 1993 it will be 30th of Sha’ban but is there actu­al­ly a chance of sight­ing the moon; both min­istries admit­ted that accord­ing to moon sight­ing cal­cu­la­tions there was no chance of sight­ing yet Ramad­han was announced in Saudia the next day.

The third proof is that in Saudia moon sight­ing is not com­mon amongst the com­mon pop­u­la­tion despite clear hori­zons; no one can be pre­sent­ed in Saudi Ara­bia who has fast­ed upon sight­ing the moon him­self even though in case of clear hori­zon, per­pet­u­al sight­ing is nec­es­sary.

The fourth proof is that the moon is gen­er­al­ly sight­ed else­where 2–3 days after­wards.

The fifth proof is that the phas­es of moon are out of synch i.e. full moon is not seen on the four­teen­th in Saudi etc and the­se can be seen by any­one in Saudia.

Based on the­se evi­dences it is can be deduced that moon sigh­ing is not prac­ticed in Saudi Ara­bia. There­fore to make Saudi the basis of the­se deci­sions would be wast­ing your acts o wor­ship and this is also the opin­ion of Hazrat Mufti Taqi Usmani.

Mufti Abdul-Sat­tar
Mufti Muham­mad Abdul­lah
24th of Jamidul-Thani 1424

Urdu Translation:

انتہای معتبر ذرائع سے معلوم ہوا کہ سعودیہ ميں بتيس سال کا کيلينڈر گرین ویچ (لندن) کے مطابق مرتب کر ليا گيا ہے۔ اسی کے مطابق عيد و چاند وغيرہ کا اعلان هوتا ہے۔ چاند دیکه کر یا شهادت شرعيۃ کے مطابق نهيں کيا جاتا جس کی بنيادی دليل سعودیہ کيلنڈر کے مقدمہ ميں اس کی تصریح ہے۔ مقدمہ کی عبارت درجہ ذیل هے تصدر هذا التقویم الهجری لاثنين وثلاثين سنة بنا علي الحسابات العلمية الفلكية التي تعبر التقويت العالمي لولادة الهلال الفلكية اساساً لدخول الشهر …الخ …رسالۃ رویت هلال علم فلکيات کی روشنی ميں

دليل ثانی سعودیہ وزارۃ الدفاع و الطيران سے پوچها گيا کہ ٢١ فروری ١٩٩٣ کو آپ کے ہاں تيس شعبان ہو گی۔ کيا ٢١ فروری شام کو قمری حساب سے چاند نظر آنا ممکن بهی ہے؟ تو ان دونوں محکموں نے واضح الفاظ ميں اعتراف کيا کہ ٢١ فروری کو رمضان کا چاند نطر آنا قمری حساب سے ممکن ہی نهيں ليکن اسکے باوجود٢١ فروری کی رات رمضان شروع ہونے کا اعلان کے دیا گيا۔ وزارۃ الدفاع و الطيران کا جواب آخر ميں ملاحضہ ہو۔

سعودیہ ميں مطلع صاف ہونے کے باوجود بهی رویت عام نهيں ہوتی۔مملکت سعودیہ کا ایک شخص بهی پيش نهيں کيا جا سکتا جس نے رمضان کا روزہ خود چاند دیکه کر رکها ہو۔ حالانکہ مطلع صام ہونے کی صورت ميں رویت متواتر ضروری ہے۔ هندیہ ميں ہے وان لم یکن بالسماء علۃ لم تقبل الشهادۃ جمع کثير یفع العلم بخبرهم۔۔۔۔ وسواء فی ذالک رمضان و شوال و ذوالحجۃ۔ ج ١ ص ١٠١

۴ سعودیہ اعلان کے دو یا تيں دن بعد عموماً رویت ہوتی ہے۔ حضرت مولانا ثمير الدین صاحب زید مجهدهم نے اپنے رسالہ رویت هلال ميں متعدد حضرات کا مشاهداتی بيان نقل کيا ہے

 سعودی اعلان کے مطابق چودہ تاریخ کو چاند کبهی مکمل نهيں ہوتا جبکہ سات تاریخ کو نصف اور اور چودہ کو مکمل ہونا چاہيے۔ اب بهی اس چيز کا ہر شخص مشاهدہ کر سکتا هے۔

ان دلائل سے معلوم ہوا کہ سعودیہ ميں رمضان و عيد کا فيصلہ رویت سے نهيں ہوتا۔

لهذا سعودیہ کو اس بارے ميں مدار بنانا گویا عبادت کو ضياع پر پيش کرنے کے مترادف ہے۔

حضرت اقدس مولانا محمد تقی عثمانی دامت برکاتهم کی بهی یهی راے ہے۔ فقط والله اعلم